سیاسیقانونی

ہائیکورٹ نے نیب کو17 جون تک شہباز شریف کو گرفتار کرنے سے روک دیا، ضمانت منظور

شہباز شریف کی لاہور ہائیکورٹ پیشی، سخت حفاظتی انتظامات ، نیب کو مطلوبہ معلومات دے چکے پھر بھی گرفتاری کا خدشہ ہے ، وکیل

لاہورہائیکورٹ نے اثاثہ جات اور منی لانڈرنگ کیس میں شہبازشریف کونیب کو گرفتارکرنے سے روک دیااورشہبازشریف کی 17 جون تک عبوری ضمانت منظور کرلی۔
تفصیلات کے مطابق لاہورہائیکورٹ میں اثاثہ جات اور منی لانڈرنگ کیس میں شہبازشریف کی عبوری ضمانت کی درخواست پر سماعت ہوئی،مسلم لیگ ن کے صدراوراپوزیشن لیڈر قومی اسمبلی شہبازشریف عدالت میں پیش ہوئے، جسٹس طارق عباسی کی سربراہی میں 2 رکنی بنچ نے سماعت کی۔عدالت نے استفسار کیاکہ درخواست گزارشہبازشریف کہاں ہیں ؟،شہباز شریف کے وکیل امجد پرویز کے دلائل دیتے ہوئے کہاکہ شہبازشریف کینسرکے مریض اورکمرہ عدالت میں موجود ہیں،عدالت نے استفسار کیا کہ کیا آپ کو گرفتاری کا خدشہ ہےوکیل شہبازشریف نے کہاکہ نیب کوریکارڈ دے دیا پھربھی گرفتاری کیلئے بے تاب ہے ،شہبازشریف کو 5 اکتوبر 2018 کوصاف پانی کیس میں بلایا گیا،دوران ریمانڈ شہبازشریف کورمضان شوگر ملز کیس میں گرفتارکرلیاگیا،نیب 63 دن کے ریمانڈ میں تفتیش کرتی رہی۔

عدالت نے کہا کہ شہباز شریف کے خلاف کیس کس سٹیج پر ہے،وکیل درخواستگزارنے کہاکہ شہبازشریف کیخلاف کیس انویسٹی گیشن کی سٹیج پرہے،عدالت نے کہاکہ نیب والے کہاں ہیں ،روسٹرم پرآئیں ،عدالت نے استفسارکیاکہ کیانیب شہبازشریف کی درخواست ضمانت کی مخالفت کرتاہے؟،نیب وکیل نے کہاکہ نیب شہبازشریف کی ضمانت کی مخالفت کرے گا،شہبازشریف کی طلبی 2 جون،وارنٹ گرفتاری 28 مئی کے تھے،عدالت نے کہاکہ جب وارنٹ پہلے نکلے تو 2 جون کوکیوں بلایا ؟،وکیل نیب نے کہاکہ جب گرفتاری کاموادآیا تب شہبازشریف کے وارنٹ جاری کیے،

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button