ٹیکنالوجی

کورونا وائرس کی جھوٹی افواہوں سے نمٹنے کے لئے فیس بک میسنجر کا اہم اقدام

کورونا وائرس کی جھوٹی افواہوں سے نمٹنے کے لئے فیس بک میسنجر نے بڑے پیمانے پر پیغامات پر پابندی عائد کر دی ہے۔

 

 کورونا وائرس کی جھوٹی افواہوں سے نمٹنے کے لئے فیس بک میسنجر نے بڑے پیمانے پر پیغامات پر پابندی عائد کی ہے غیر ملکی میڈیا رپورٹ کے مطابق فیس بک میسینجر کمپنیز نے دعوی کیا ہے کہ کورونا وائرس کے بارے میں غلط معلومات پھیلانے سے روکنے کی کوشش میں فیس بک بہت سارے لوگوں کو پیغامات بھیجنے سے روک سکتا ہے

رپورٹ کے مطابق کمپنی اس حوالے سے میسنجر کے لئے ایک نئی خصوصیت کی جانچ کر رہی ہے جس میں صرف پانچ افراد کو پیغامات بھیجنے کی اجازت دی گئی ہے جس سے ان کے بارے میں سوچے بغیر دھوکہ دہی یا افواہوں کو پھیلانا مشکل ہو جائے گا

تاحال فیچر دستیاب نہیں ہے لیکن فیس بک نے تصدیق کی ہے کہ کمپنی میں اس کی جانچ کی جارہی ہے

یہ سب واٹس ایپ نے گروپوں میں غلط فہمی پھیلانے سے روکنے کے لئے اسی طرح کی پابندی شامل کرنے کے بعد کیا ہے

چونکہ واٹس ایپ اور فیس بک میسنجر جیسی چیٹ ایپس نجی ہیں ، لیکن کمپنیزصارفین کو آسانی سے معلومات بھیجنے کی اجازت دیتی ہیں لہذا وہ خاص طور پر دھوکہ دہی اور افواہوں کا مروجہ ذریعہ بن چکے ہیں

میسنجر میں ہونے والی تبدیلیوں کی تحقیق جین منچنگ وونگ نے دریافت کیں ، جنہوں نے ایک ایسی ٹویٹ کی جس میں ایپ کے اندر چھپی ہوئی ایک کمانڈ مل گئی ، جس میں بتایا گیا کہ یہ کیسے کام کرسکتا ہے

فیس بک کے ترجمان نے تصدیق کی کہ اس فیچر کی غلط خبروں کو روکنے کے طریقے کے طور پر جانچ پڑتال کی جا رہی ہے ، خاص طور پر جھوٹی کہانیوں اورافواہوں پر توجہ دی جارہی ہے جو کورونا وائرس کے بارے میں ہیں

انہوں نے کہا کہ ہم اپنے پلیٹ فارمز پر غلط معلومات پھیلانے کو محدود کرنے کے لئے سخت کوشش کر رہے

ہیں۔ خاص طور پر کووڈ ۱۹ کے ساتھ،اور ہم مزید فیچرز کی تلاش کر رہے ہیں جیسے کہ آپ ایک وقت میں کتنے چیٹس پر پیغام بھیج سکتے ہو ، اس کے لئے سخت حدود کی جانچ کرنا

ٹویٹرمیں “اس فیچر پر ابھی بھی کام ہو رہا ہے اور ابھی تک بیرونی طور پر جانچ نہیں کررہی ہے

اس نئے فیچر کی تصدیق اس وقت ہوئی جب فیس بک نے اعلان کیا کہ وہ میسنجر کو کورونا وائرس پھیلنے کے بارے میں قابل اعتماد اور مستند معلومات پھیلانے کیلئے استعمال کرنے کی کوشش کرے گا

انہوں نے کہا کہ وہ سرکاری اداروں کو ترقی پذیر شراکت داروں کے ساتھ ملا کر ان کی مدد کرنا چاہے گی جو ان کو پلیٹ فارم کو ہر ممکن حد تک موثر طریقے سے استعمال کرنے کی اجازت دے گی۔

انہوں نے کہا ڈویلپرز کا مقصد اقوام متحدہ کی صحت کی ایجنسیوں جیسی تنظیموں کو معلومات کو زیادہ تیزی سے شیئر کرنے کی اجازت دینا ، اور خودکار ردعمل کے ذریعہ عام طور پر پوچھے گئے سوالات کے جوابات تیزی سے دینے کا اہل ہونا ہے

فیس بک نے یہ بھی کہا کہ وہ ایک آن لائن ہیکتھون چلائے گا جس کا مقصد ڈویلپرز کو “پیغام رسانی کے حل کی تشکیل کیلئے حوصلہ افزائی کرنا ہے جس میں کورونا وائرس سے متعلق امور جیسے کہ سماجی دوری اور درست معلومات تک رسائی” کو حل کرنا ہے

فیس بک نے کہا ، شرکاء کو میسنجر ٹولز اور تعلیمی مواد پر خصوصی معاونت حاصل ہوگی ، اور یہ معلومات کمپنی سے اساتذہ حاصل کریں گے تاکہ وہ اپنے خیالات کی تشکیل میں ان کی مدد کرسکیں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button