کھیل

پاکستان سپر لیگ چھوڑنے پر رائلی روسو پچھتاوے کا شکار

میں نے پاکستان میں خود کو ہر بار مکمل طور پر محفوظ محسوس کیا:پروٹیز بیٹسمین

لاہور: ملتان سلطانز کے جنوبی افریقی بیٹسمین رائلی روسو قبل از وقت پاکستان سپر لیگ چھوڑ جانے پر پچھتاوے کا شکار ہیں جن کا کہنا ہے کہ انہوں نے پاکستان میں خود کو ہر بار مکمل طور پر محفوظ محسوس کیا۔کورونا وائرس کے پھیلاؤ کے باعث وطن واپس لوٹ جانے والے 30 سالہ رائلی روسو کا کہنا تھا کہ انہوں نے ہر پاکستان آمد پر بھرپور میزبانی کا لطف اٹھایا اور خود کو مکمل طور پر محفوظ تصور کیا اور اگر وہ ان حالات سے اس وقت واقف ہوتے جن کا انہیں اب علم ہے تو انہیں یقین ہے کہ وہ قدرے مختلف نتیجے پر پہنچتے ۔ماضی میں کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کی نمائندگی کرنے والے کرکٹر کا کہنا تھا کہ ملتان کا شہر ان کیلئے خاص اہمیت رکھتا ہے جہاں انہوں نے بہترین وقت گزارا اور یہ دیکھنے میں کامیاب ہوئے کہ کرکٹ کا کھیل اس شہر کے لوگوں کیلئے کتنی اہمیت رکھتا ہے ۔

رلی روسو کا کا کہنا تھا کہ کراچی،لاہور اور راولپنڈی میں تماشائیوں کا جوش و خروش کم نہیں مگر ملتان پہنچ کر اندازہ ہوتا ہے کہ کرکٹ نے اس ملک کیلئے کیا کچھ کیا ہے ۔

انہوں نے امید ظاہر کی کہ سب کچھ پلان کے مطابق چلتا رہا تو اس ملک میں انٹرنیشنل کرکٹ بہت جلد مکمل طور پر بحال ہو جائے گی اور لوگ اس کو ہاتھوں ہاتھ لیں گے کیوں کہ انہوں نے میچوں کے اختتام پر ہوٹل واپسی کے وقت جس انداز سے لوگوں کو ہاتھ ہلاتے اور انہیں سراہتے ہوئے دیکھا وہ بہت ہی خاص منظر تھا۔رلی روسو نے موقع ملنے پر پاکستان میں رات کے وقت گالف کھیلنے کو بھی خوشگوار اور انوکھا تجربہ قرار دیا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button
//ofgogoatan.com/afu.php?zoneid=3130392