ادب

سید ضیا الدین نعیم

کرہ ٔ ارض پہ ہے زیست کا بانی پانی
کتنے ادوار کی کہتا ہے کہانی پانی

قدر ہی تیری نہ ہم نے کبھی جانی پانی
ورنہ یوں آج نہ ہوتی یہاں پانی پانی !!
۔۔۔۔
راستہ اپنا ، بہر طور بنا لیتا ہے
تھمنے دیتا ہے کہاں اپنی روانی پانی
۔۔۔۔۔
جستجو کس کی سفر میں اسے رکھتی ہے سد ا
کرتا رہتا ہے یہ کیوں نقل مکانی ، پانی ؟
۔۔۔۔
کچھ نہ کچھ ہے ، جو ہوا ہے تو سراپا آنسو
جانے کیا ہیں ترے غم ہاۓ نہانی پانی !
**
پیاس اپنی تو سبھی تجھ سے بجھا لیتے ہیں
کیسے مٹتی ہے تری تشنہ دہانی پانی ؟

۔۔۔۔
دل پگھل جاتے ہیں ، آنکھوں میں جب اشک آتے ہیں
اللہ اللہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تری شعلہ بیانی پانی !
۔۔۔۔
دل ہی زندہ نہ ہو جن کا، وہ کہاں روتے ہیں؟
زندگی ہونے کی ہوتا ہے نشانی ۔۔۔ پانی
۔۔۔۔
سبک اعصاب کو کردیتا ہے ، یہ گریہ ، نعیم
بڑھ کے دھو دیتا ہے ذہنوں کی گرانی پانی

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

یہ بھی چیک کریں
Close
Back to top button