ادب

افضل خان

میں رائگانی بھی لکھوں تو رائگاں نہ سمجھ
مری غزل کو مرا حلفیہ بیاں نہ سمجھ

یہ زندگی کا سلیبس ہے، تجھ سے کیسے کہوں
فلاں سوال سمجھ اور فلاں فلاں نہ سمجھ

جہاں میں ڈوب گیا تھا وہیں ملوں گا تجھے
میں ایک سنگِ گراں ہوں مجھے رواں نہ سمجھ

یہ میں جو بول نہیں پا رہا ترے آگے
یہ واقعہ ہے اسے زیبِ داستاں نہ سمجھ

شنید و گفت کی مہلت کہاں ہے پردیسی
تُو مجھ سے آنکھ ملا لے مری زباں نہ سمجھ

میں ڈول ڈال کے غزلیں نکالتا ورنہ
مرے دہن کو دہن ہی سمجھ، کنواں نہ سمجھ

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

یہ بھی چیک کریں
Close
Back to top button